Chief Justice of Azad Kashmir

Chief Justice of Azad Kashmir

SHARE
chief justice of azad kashmir

مظفرآباد(پی آئی ڈی)26 اکتوبر2020 ءچیف جسٹس آزادجموں وکشمیر و چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل جسٹس راجہ سعید اکرم خان اور سینئر جج سپریم کورٹ آزاد جموں وکشمیر جسٹس غلام مصطفی مغل نے دھیر کوٹ سے تعلق رکھنے والے ممتاز کشمیر ی عالم دین مولانا عبدالحئی کے انتقال پر دلی افسوس کا اظہار کیا ہے۔ اپنے ایک تعزیتی پیغام میں چیف جسٹس آزادجموں وکشمیر و چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل جسٹس راجہ سعید اکرم خان نے کہا ہے کہ مرحوم کی وفات سے ہم ایک انتہائی عظیم ہستی سے محروم ہو گے ہیں۔ مرحوم آزکشمیر کے دیگر تمام علمائے کرام کی مانند ایک عالم با عمل اور انتہائی حلیم شخصیت کے مالک تھے۔ انہوں نے اپنی ساری زندگی دینی تعلیم اور مذہبی ہم آہنگی کے لیے وقف کر رکھی تھی۔ مرحوم کی تحریک آزادی کشمیر اور اسلامی نظام کے نفاذ کے لیے خدمات کو تادیر یا د رکھا جائے گا۔ دکھ اور رنج کی اس گھڑی میں مرحوم کے سوگوار خاندان اور ان کے چاہنے والوں کے ساتھ برابر کے شریک ہیں۔ اللہ مرحوم کے خاندان اور ان کے چاہنے والوں کو صبر جمیل عطا فرمائے اور عالم بر زخ میں ان کے درجات بلند فرمائے۔ آمین

۔ایبٹ آباد(پی آئی ڈی) 26 اکتوبر2020 ء ممبر آزاد جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی و سجادہ نشیں درگاہ بساہاں شریف ڈاکٹر پیر علی رضا بخاری نے کہا کہ فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت انتہائی قابل مذمت فعل ہے جس پر سارا عالم اسلام سراپا احتجاج ہے،ایسی شر انگیزیاں امن عالم امن کے لئے شدید خطرے کا باعث ہیں اور ساتھ ہی اتحاد بین المذاہب کی راہ میں بھی بڑی رکاوٹ ہے،کسی بھی مذہب کی توہین روک تھام کے لئے اقوام متحدہ آگے بڑھ کر اقدامات اٹھائے وہ گذشتہ روز حویلیاں میں خانقاہ محبو ب آباد شریف میں عالمی میلاد کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ کانفرنس سے ملک اور دنیا بھر سے علما نے بھی ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کیا۔ ڈاکٹر پیر علی رضا بخاری نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کچھ عرصہ سے تسلسل کیساتھ عالمی سطح پر عاشقان رسول کے جذبات کو مجروح کیا جا رہا مسلمان کبھی بھی حضور پاک کی شان میں گستاخی برداشت نہیں کر سکتے۔ انہوں نے کہا کہ حضور اکرم ﷺ نے عصبیت، فرقہ واریت، جہالت کے اندھیروں سے امت کو نکال کر دین کا راستہ دکھایا، آمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے دنیا میں امن کا بولا بالا ہوا، انسانیت کو احترام ملا اور قتل ناحق کا خاتمہ ہوا، ایک دوسرے کے خون کے پیاسے رشتہ اخوت سے آشنا ہوئے، ایک قوم، ایک ملت کا تصور اجاگر ہوا۔میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے رنگ و نسل کے تفاخر اور حسب نسب کے غرور سب ختم ہو گئے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فضیلت کا معیار تقوی قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہمیشہ امن کی بات کی ہے، جشن میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم منانے والے سیرت النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ہر پہلو پر ایمان رکھتے ہیں۔ شدت پسند ملک و قوم اور اسلام کو بدنام کر رہے ہیں، آمد رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم عروج انسانیت کا باعث بنی۔ فخر انسانیت حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم راہبر آدمیت بن کرظہور پذیر ہوئے۔ قوم مسلم تا قیامت اللہ تعالیٰ کے حبیب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے میلاد پر خوشیاں منا کر اظہار تشکر کرتے رہیں گے۔انہوں نے کہا کہ عید میلاد النبی ﷺ کا دن ہمیں یہ پیغام دیتا ہے کہ موجودہ حالات کے پیش نظر جب کہ دشمن ہم پر میلی نظریں جمائے ہوئے ہے ملک کے اندر دہشت گردی کے واقعات ہو رہے ہیں ملت اسلامیہ کو اتفاق و اتحاد سے رہنے کی ضرورت ہے، انہوں نے کہا کہ کشمیر میں ہندوستان مسلمانوں پر ظلم و بربریت کے پہاڑ توڑ رہا ہے جس پر امت مسلمہ کی خاموشی مجرمانہ ہے اگر مسلمان یکجا نہ ہوئے تو آج کشمیر کل کسی اور مسلم ملک کے مسلمان زوال کا شکار ہونگے باطل کے سامنے یکجہتی کیساتھ کھڑے ہونے کی ضرورت ہے۔

SHARE
Previous articlePM AJK News
Next articleSheikh Adil Masood Advocate